دیار خواب

دیار خواب

دیار خواب کے ادھر

مسافروں کی بستیاں

نشیلی کالی بدلیاں شرابیوں کی ٹولیاں

نشہ بڑھاتی دھانی دھانی چیزیاں

مہکتے کنوارے جسم چلمنوں کی تیلیاں

سجیلی ریشمی پروں میں رنگ برنگی تتلیاں

پکی پکائی عورتوں میں شہوتوں کی بجلیاں

ذرا سی رات بھیگ جائے،

پھر سنو اندھیرے کی زباں

تھکے تھکائے جسم ہانپتی لٹکتی چھاتیاں

شفیق آنکھیں ماؤں کی رحیم لوریاں

خزاں لٹاتی کہکشاں،

دھواں اگلتی چمنیاں

دھڑکتے دل، نڈھال جسم، دھوپ کے مکاں

سنہرے سرخ پیرہن بھگوتی شہر زادیاں

گدیلے گندے پوکھروں میں تیرتی ہیں مچھلیاں

نہ جانے کس گناہ کی سزا میں بہتی ندیاں

ذرا سی رات بھیگ جائے،

پھر سنو اندھیرے کی زباں

دیار خواب کے ادھر

مسافروں کی بستیاں

Leave a Comment

Pin It on Pinterest

Shares
Share This